Showing posts with label Informative. Show all posts
Showing posts with label Informative. Show all posts

Share The Word

Don't Do This To Your Mother



Bullet Mechanism

How Does a Bullet Works




Hospitals in London

10 Best Hospitals in London


To save you from such hospitals in London we have decided to show you the best hospitals in London so you can stay safe and get the right treatment from the right place at the right time because human life is extremely precious. So here we go to out topic.

Hospital # 1 : The Heart Hospital

Hospital Location: 16-18 Westmoreland St, London W1G 8PH
Hospital Contact Number: 020 3456 7898
An amazing facility for all the Londoners and this hospital is considered one of the best hospitals in London because of more than one reasons. But one of those reasons is its quality staff and their ability to solve just about any problem and treat almost all kind of patients that are in emergency or are simply looking to get some help about some disease. If you are living around Westmoreland Street then you have to check out this hospital when you are in need.
Hospital # 1 : The Heart Hospital
Hospital # 2 : University College Hospital
Hospital Location: 235 Euston Rd, London NW1 2BU
Hospital Contact Number: 020 3456 7890
If you are in hurry either because you have some emergency or you simply don’t have much time on your hand because of some other reasons then this is going to be your place. In the early days of this hospital it was among the worst hospitals in entire London because the staff here was too lazy and they would take hours of time to even do the simplest things. However, that has completely changed now and at the current moment it is by far the best hospital working in London.

Hospital # 2 : University College Hospital

Hospital # 3 : Mount Vernon Hospital - Hospitals in London

Hospital Location: Rickmansworth Rd, Northwood, Middlesex HA6 2RN
Hospital Contact Number: 01923 826111
Another excellent place that has been serving the people of London for a good amount of time now. They have a lot of reasons why they can brag about being on of the best hospitals in London and those reasons include extremely cheap parking, expert medical staff and very caring nurses to help you heal through your problems. However, they also have some downfalls and one of their downfall is that sometimes they can be a little lazy but that only happens sometimes.

Hospital # 3 : Mount Vernon Hospital

  • Hospital # 4 : West Middlesex University Hospital
Hospital Location: Twickenham Rd, Isleworth, Middlesex TW7 6AF
Hospital Contact Number: 020 8560 2121
Some people seem to have sour taste in their throats about this hospital but they all seem to give no legitimate reasons why so. We guess its just that they don’t like it but that doesn’t mean hospitals is bad in itself as it is one of the most incredible hospitals in London that has been serving humanity and saving lives for years now.
Hospital # 4 : West Middlesex University Hospital
Hospital # 5 : Homerton University Hospital
Hospital Location: Homerton Row, London E9 6SR
Hospital Contact Number: 020 8510 5555
If you want to be treated at a hospital in London that has brilliant reputation and most trust among the people of London than it has got to be no other hospitals in London other than Homerton University Hospital. It is one of the most incredible health facilities you are ever likely to see.
Hospital # 5 : Homerton University Hospital

Hospital # 6 : Kingston Hospital - Hospitals in London

Hospital Location: Kingston Hospital N H S Trust, Galsworthy Rd
Hospital Contact Number: 020 8546 7711
There might be no other hospital in London that is as much dedicated and caring as is the Kingston Hospital. They are self proclaimed best hospital in London and if we visit them we can say that they certainly are.

Hospital # 6 : Kingston Hospital

Hospital # 7 : Royal Free Hospital
Hospital Location: Pond St, London NW3 2QG
Hospital Contact Number: 020 7794 0500
Royal Free Hospital has some bad reputation in the past but now it is improving at a faster rate and people are once again beginning to trust their service. We don’t say that they are the best but they certainly are worthy enough to be included into this list of best hospitals in London.

Hospital # 7 : Royal Free Hospital

  • Hospital # 8 : Guy’s Hospital
Hospital Location: Great Maze Pond, London SE1 9RT
Hospital Contact Number: 020 7188 7188
A beautifully built building, great medical staff and the memorial of Thomas Guy is what strongly helps this hospital stand out of the crowd and people definitely realize that which is the reason why so many trust this place and go there is their urgent as well as normal medical needs.

Hospital # 8 : Guy's Hospital

Hospital # 9 : Western Eye Hospital
Hospital Location: 153-173 Marylebone Rd, London NW1 5QH
Hospital Contact Number: 020 3312 6666
As the name suggests this is basically an eye hospital but if you are in real emergency you should expect them to take care of you. They are so nice after all.

Hospital # 9 : Western Eye Hospital

Hospital # 10 : Central Middlesex Hospital
Hospital Location: Acton Ln, London NW10 7NS
Hospital Contact Number: 020 8965 5733
This hospital like many above has been working for a good time now and has built a reputations as one of the greatest hospitals in London where you can go to get treatment for a lot of things and you would be sure they won’t cause any damage to you because the probably know what they do and how to do it which is why we have listed them here.
Hospital # 10 : Central Middlesex Hospital
  • These are by far the “best hospitals in London” and they have almost every facility that might be required to save a human being’s life. Just make sure that you contact them at the right time because if you are late in getting there then they might not be able to do anything. Let us know what you think about these hospitals in London and if you have experience with any of them kindly let us know.

Inside The Tomb

Exclusive


ایک الزام یا ایک سوال

ایک الزام یا ایک سوال آپ نے اکثر صحابہ کرام سے جلنے والے سیاہ کار روافض سے سنا ھوگا کہ جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی وفات ھوئی تو ساری زندگی آپ سے محبت و عشق کا دعو'ی کرنے والے حضرت ابوبکر صدیق و حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہما آپ کی تجہیز و تدفین کے وقت کہاں تھے..؟؟؟

کیا یہی ان کے عشق کی حقیقت ھے کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کا ابھی جنازہ بھی نہ پڑھا گیا اور تدفین بھی باقی ھے مگر انہیں چھوڑ کر خلافت کے حصول کی خاطر سقیفہ بنو ساعدہ چلے گئے..؟؟؟

یہی بات کچھ عرصہ پہلے اھل سنت عالم کا لبادہ اوڑھے لیکن درحقیقت ایک متعصب رافضی ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے ایک نجی مجلس میں کہی تھی.. یہ ایک ایسا سوال اور الزام ھے جو بہت سی غلط فہمیوں پر مشتمل ھے اور جس کی وجہ سے میں نے کئی سنی احباب کو بھی سرسری معلومات کی بنا پر پریشان اور گومگو حالت میں دیکھا ھے.. اس لیے حقائق کی روشنی میں اس سوال اور الزام کا جائزہ لینے کی ضرورت ھے..

اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں مسلمانوں کے اجتماعی نظام کے متعلق یہ فیصلہ کر دیا ھے کہ ان کے معاملات باھمی مشورے سے طے ھوتے ھیں.. ارشاد باری تعالیٰ ھے..

" اور ان کا نظام باھمی مشورے پر مبنی ھے.. " (شوریٰ 42:38)

قرآنِ پاک کا یہ حکم عرب کے اُس قبائلی معاشرہ میں اترا جس میں نہ کسی اجتماعی ریاست کا تصور تھا اور نہ کسی واحد حاکمِ اعلیٰ کی کوئی تاریخ ھی پائی جاتی تھی.. اسلام سے قبل ھر قبیلے کا اپنا سردار ھوتا جو اس کے معاملات چلاتا تھا.. عرب میں کوئی باقاعدہ ریاست تھی اور نہ اس کا کوئی مستقل حکمران تھا.. حتیٰ کہ مکہ کے مرکزی شہر میں بھی کوئی حکمران نہ تھا.. وھاں بمشکل تمام ایک ڈھیلا ڈھالا نظمِ اجتماعی تھا جس میں قبائلی سردار کسی اجتماعی مسئلے پر اکٹھے ھوجاتے اور مل جل کر کوئی فیصلہ کر لیتے..

ایسے میں اسلام کا ظہور ھوا.. ھجرت کے بعد مدینہ کی ریاست وجود میں آئی.. حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم فطری طور پر اس ریاست کے حکمران تھے.. 8 ھجری تک یہ ریاست صرف مدینہ اور اس کے اطراف تک محدود تھی.. پھر فتحِ مکہ کے بعد صرف تین برس میں یہ ریاست پورے عرب میں پھیل گئی.. یہ وہ عرب تھا جہاں انتشار و اختلاف کے شکار قبائل اور طرح طرح کی عصبیتیں موجود تھیں اور جو پہلی دفعہ کسی ایک حکمران کے ماتحت اکٹھا ھوا تھا مگر لوگوں کا حضور پاک پر بحیثیت "رسول اللہ" ایمان اور حضور پاک کا سب سے برتر قبیلے یعنی قریش سے تعلق وہ چیز تھا جس نے عرب میں یہ سیاسی انقلاب برپا کردیا.. تاھم حقیقت یہ تھی کہ نئے ایمان لانے والے قبائل ابھی تک اس پورے نظام کے عادی نہیں ھوئے تھے..

اپنے آخری وقت میں حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کو اس صورتحال کا مکمل اندازہ تھا چنانچہ آپ کو جب اندازہ ھو گیا کہ رخصت کا وقت قریب ھے تو آپ نے اپنی وفات سے پانچ دن قبل مسجدِ نبوی میں آخری خطبہ دیا.. اس خطبے میں آپ نے مسلمانوں کو آخری وصیتیں کیں مگر سیاسی حکمرانی کے عملی طریقے کے بارے میں کوئی رھنمائی نہیں کی.. البتہ اُس شخص کی طرف اشارہ کردیا جو آپ کی نظر میں اس منصب کا سب سے بڑھ کر اھل تھا چنانچہ اس موقع پر آپ نے دین اور اپنی رفاقت کے حوالے سے حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی خدمات گنوائیں اور حکم دیا کہ مسجد نبوی میں ان کے دروازے کے سوا ھر دروازہ بند کردیا جائے.. (متفق علیہ)

اگلے دن سے اپنی جگہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کو مسجد نبوی کی امامت سونپ کر اپنا منشا لوگوں پر مزید واضح کر دیا.. (متفق علیہ)

چنانچہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی حیاتِ طیبہ میں حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے سترہ نمازیں پڑھائیں جن کا سلسلہ شبِ جمعہ کی نمازِ عشاء سے شروع ھو کر ۱۲/ربیع الاوّل دوشنبہ کی نمازِ فجر پر ختم ھوتا ھے..

چار دن بعد پیر کے دن ظہر سے قبل حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کا وصال ھو گیا.. مسلمانوں پر اپنے محبوب نبی کے رخصت ھونے کا انتہائی شدید صدمہ تھا مگر اس کے ساتھ دوسری تلخ حقیقت یہ تھی کہ قبائلی عصبیت سے بھرپور عرب کی نئی ریاست میں حکمرانی کا منصب خالی ھو چکا تھا اور کسی جانشین کا ابھی تک تعین نہیں ھوا تھا.. چنانچہ وھی ھوا جو اس پس منظر میں متوقع تھا.. انصار کے بعض لوگ حضور کی جانشینی کے مسئلے پر گفتگو کرنے کے لیے سقیفہ بنی ساعدہ میں اکٹھے ھوئے.. حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کو ان کے اس ارادے کی بروقت خبر ھوگئی..

حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ جو بلاشک و شبہ اس وقت مسلمانوں کے سب سے بڑے لیڈر تھے' ان سے اس موقع پر اگر معمولی سی بھی کوتاھی ھو جاتی تو اسلام کی تاریخ بننے سے پہلے ھی ختم ھوجاتی.. ان حالات میں حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے انتقال کی خبر سن کر سیدھے مسجد نبوی تشریف لائے اور ان شاندار الفاظ سے مسلمانوں کا حوصلہ بلند کیا..

" جو محمد صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی عبادت کرتا تھا وہ جان لے کہ ان کا انتقال ھو گیا ھے.. اور جو اللہ کی عبادت کرتا ھے تو وہ جان لے کہ اللہ ھمیشہ زندہ رھنے والا ھے کبھی نہیں مرے گا.. "

(بخاری 640/2641)

ان پر یہ ذمہ داری بھی آن پڑی کہ وہ مسلمانوں کی رھنمائی کریں.. چونکہ حضرت علی رضی اللہ عنہ اور حضرت عباس رضی اللہ عنہ سمیت بنو ھاشم سے تعلق رکھنے والے صحابہ کرام کے لیے یہ دوھرا المناک واقعہ تھا کہ ایک تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم تمام صحابہ کرام کی طرح ان کے محبوب نبی تو تھے ھی لیکن آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم سے بنو ھاشم کا بہت قریبی خون کی رشتہ بھی تھا چنانچہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ حضرت عمر اور حضرت ابو عبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہما جیسے اھم قریشی سرداروں کو لے کر انصار کے ھاں گئے اور ایک طویل بحث و گفتگو کے بعد حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے بعض ارشادات کی روشنی میں انصار کو اس بات پر قائل کرنے میں کامیاب ھوگئے کہ خلیفہ قریش میں سے ھونا چاھیے.. اس کے بعد ھر شخص کو معلوم تھا کہ قریشی مسلمانوں میں سب سے بڑا لیڈر کون ھے چنانچہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے ان کا نام تجویز کیا جسے سب نے فوراً تسلیم کر لیا.. یوں ریاستِ مدینہ میں انتشار کا خطرہ ٹل گیا مگر اس پورے عمل میں پیر کے دن کی رات ھوگئی..

اگلے دن منگل کو حضور پاک صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کو سیدنا علی رضی اللہ عنہ اور دیگر قریبی اعزا نے غسل دیا.. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی قبر مبارک آپ کی وفات کی جگہ پر ہی بنائی گئی تھی اس لیے تدفین اور نمازِ جنازہ کے لیے کہیں اور جانے کا سوال نہیں تھا..

یہاں ایک بات کی تفصیلی وضاحت کی بھی ضرورت ھے.. اکثر لوگ سمجھتے ھیں کہ جیسے عام طور پر نماز جنازہ ادا کی جاتی ھے تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی نماز جنازہ بھی یونہی ادا کی گئی ھوگی جس میں حضرت ابوبکر صدیق و حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہما سقیفہ بنو ساعدہ کی طرف چلے جانے کی وجہ سے شرکت نہ کرسکے ھوں گے.. ایسا کچھ بھی نہیں ھے.. حقیقت یہ ھے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی باقائدہ ایک ھی بار نماز جنازہ ادا ھی نہیں کی گئی..

ھوا یوں کہ فرمان نبوی کی روشنی میں حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کے مشورہ پر حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کے حجرہ شریف میں ھی جس بستر پر آپ کی وفات ھوئی' اس بستر کو ھٹا کر اسی جگہ قبر تیار کی گئی.. غسل و تکفین کے بعد آپ کے جنازہ شریف کو وھیں قبر کے کنارے رکھ دیا گیا.. صحابہ گروہ در گروہ حجرہ شریف میں آتے اور نماز جنازہ پڑھ کر باھر نکل جاتے.. کوئی کسی کی امامت نہ کرتا تھا.. الگ الگ بغیر امام کے نماز پڑھی گئی.. ایک روایت یہ بھی ھے کہ آپ پر نماز جنازہ نہیں پڑھی گئی بلکہ صحابہ حجرہ شریف میں داخل ھوتے ' درود و سلام اور دعا پڑھ کر باھر آجاتے.. سب صحابہ کی طرح حضرت ابوبکر صدیق و حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہما نے بھی اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی نماز جنازہ ادا کی.. اس عمل میں منگل کا پورا دن گزرگیا اور بدھ کی رات کے درمیانی اوقات میں حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کے حجرے میں حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی تدفین عمل میں آئی..

غور کیجیے کہ صحابہ کو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی وفات کے وقت سنبھالنے والے ' آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی قبر مبارک کی جگہ کا تعین کرنے والے ' آپ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی نماز جنازہ پڑھنے اور اس کا طریقہ بتانے والے حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ..!! تو ایسے میں بغض صحابہ سے لتھڑے بدبخت روافض کا یہ الزام کہ آپ رضی اللہ عنہ نے حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی نماز جنازہ نہیں پڑھی ' سواۓ ان کے خبث باطن کے سوا اور کیا کہا جاسکتا ھے..

یہ ھے وہ بات جس کا افسانہ بنا کر صحابہ کرام سے جلنے والے سیاہ کار روافض اسلام ' اس کے نبی اور ان کے بہترین پیروکاروں کے بارے میں ایسے سوالات پیدا کر دیتے ھیں جن کی بنا پر نئی نسل اسلام سے بدظن ھوجاتی ھے اور غیرمسلموں کو ھمارا مذاق اڑانے کا موقع مل جاتا ھے جبکہ ھر صاحب علم یہ بات جانتا ھے کہ حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کے ابتدائی زمانے میں خلافت کے قیام اور مہاجرین و انصار اور قریشِ مکہ کی بھرپور تائید کے باوجود عرب میں ایک زبردست بغاوت رونما ھوئی.. اندازہ کیجیے کہ اگر حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے انتقال کے وقت حضرت ابو بکر اور حضرت عمر رضی اللہ عنہما فوری فیصلہ کرکے نزاع کو ابتدا ھی میں ختم نہ کرتے اور اھل مدینہ میں باھمی انتشار پیدا ھوجاتا تو مسلمانوں کا کیا انجام ھوتا..؟

یہ جو کچھ تحریر کیا گیا ھے اس کی تائید سیدنا علی رضی اللہ عنہ کے اپنے طرز عمل سے بھی ھوتی ھے.. صورتحال کی سنگینی کا اندازہ نہ ھونے کی بنا پر انھیں ابتدا میں یہ شکایت تھی کہ مجھے مشورے میں کیوں شریک نہیں کیا گیا مگر جب ان پر معاملہ واضح ھو گیا تو انھوں نے سیدنا ابو بکر رضی اللہ عنہ کی بیعت میں تاخیر نہیں کی.. پھر اس کے بعد حضرت ابو بکر اور حضرت عمر رضی اللہ عنہما کے پورے دورِ حکومت میں انھوں نے بھرپور طریقے سے ان حضرات کی معاونت کی اور ھمیشہ ان کے قریب ترین مشیر رھے اور ان دونوں نے بھی ھر معاملے میں حضرت علی رضی اللہ عنہ کی رائے کو مقدم رکھا..

بلاشبہ صحابہ کرام وہ لوگ ھیں جنہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی رفاقت کا حق اس طرح ادا کیا کہ قرآنِ مجید نے بھی جگہ جگہ ان کے اخلاص اور قربانی کی گواہی دی ھے.. قرآنِ کریم کی اس گواھی کے بعد ان لوگوں کی صداقت کے لیے کسی اور گواھی کی ضرورت نہیں..!!

آخر میں آپ سب مسلمانوں سے ایک اپیل ھے.. اس تحریر کو جتنا ھوسکے ھر جگہ پھیلائیے تاکہ دشمنان صحابہ کرام کا غلیظ منہ بھی بند کیا جا سکے اور ان تمام مسلمانوں کا ایمان بھی بچایا جاسکے جو ان خبیث روافض کے پروپیگنڈہ سے متاثر ھو کر شک و شبہ کا شکار ھیں..

خدارا میری یہ تحریر شیئر کیجیے یا کاپی کرکے اپنی آئی ڈی یا پیج پر پیسٹ کیجیے.. جو اچھا لگے وہ کیجیے مگر اسے پھیلانا آپ پر فرض ھے..!!